تھرپارکر کے فطری حسن طور پہچانے جانے والے حسین پرندے مور ایک بار پھر رانی کھیت کی بیماری میں مبتلا ہوکر موت کے منہ میں جارہے ہیں۔

تھر میں موروں میں رانی کھیت بیماری سے 100 سے زائد مور ہلاک جب کہ درجنوں مور بیمار ہوگئے. موروں کی ہلاکت کے ماضی میں بھی بہت سے واقعات ہوچکے ہیں جس میں متعدد مور ہلاک اور بیمار ہوچکے ہیں۔

محکمہ وائلڈ لائف کے مطابق مورون کو گردن میں سوجن اور مناسب خوراک کا نہ ملنا ان کے مرنے کا بڑا سبب ہے۔ ان موروں کو بچانے کے لیئے علاقے کے لوگ اپنی مدد آپ کے تحت کام کر رہے ہیں۔

ایک ہفتے کے دوران تھرپارکر کی مختلف تحصیلیں جس میں مٹھی، اسلام کوٹ اور ڈیپلو کے 10 سے زائد گاؤں میں 100 سے زائد مور ہلاک ہوگئے اور 2 درجن سے زائد مور بیماری میں مبتلا ہیں۔

تھر باسیوں کا کہنا ھے کے مور پرندہ تھر کی پہچان ھے جس کا ہم اولاد جیسا خیال رکھتے ھیں موروں کو بیمار دیکھ کر ہم پریشان رهتے ہیں ہم نے اپنی مدد آپ کے تحت ان کا علاج کیا ھے۔

LEAVE A REPLY