عمران کمار

پتن منار 5 ہزار سال پرانا ثقافتی ورثہ ہے. یہ رحیم یار خان سے قریباً 8 کلومیٹر کی دوری پر واقع ہے. اس منار سے روہی پرکھوں کی یادیں وابستہ ہیں. یہ منار ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے اس کی دیکھ بھال کا کوئی خاطر خواہ انتظام نہ ہونے کی وجہ سے حالت ابتر ہوتی جارہی ہے۔

پتن منار بچاؤ کے نام سے ایک تحریک کا آغاز کیا گیا جس میں مہمانِ خصوصی خواجہ فرید انجینئرنگ یونیورسٹی کے وائس چانسلر نعمان طاہر صاحب، ڈسٹرکٹ بار کے جنرل سیکریٹری مرزا آمین خان، انسانی حقوق کے کارکنان میں شمیل مرزا، ضلعی وومن صدر پی ٹی آئی محترمہ صائمہ طارق، پی ٹی آئی رہنما سلطان رائے، رحمت فاؤنڈیشن کی صدر دُنیا اسلم، شاعر شہباز نیر اور یونیورسٹی کے پروفیسرز نے شرکت کی۔

سید خلیل بخاری پتن منار پر کافی عرصہ سے چھوٹے بڑے ایونٹس کروا رہے ہیں تاکہ اس منار کا مقام و مرتبہ اور ثقافت کو زندہ رکھا جا سکے۔

وائس چانسلر نعمان طاہر نے یہاں پر واٹر پلانٹ لگانے کی یقین دہانی کروائی. چولستان کے فنکاروں نے سرائیکی میں ملی نغمہ گا کر پاکستان کی سلامتی کے لیے دعا مانگی۔

LEAVE A REPLY