عمران کمار

قلعہ دراوڑ جو کہ مکمل طور پر ٹوٹ پھوٹ کا شکار تھا، پاک وائسز پر اس قلعہ کی سٹوری لگنے کی وجہ سے اس کی مرمت کا کام شروع کردیا گیا. امید ہے کہ جلد ہی مرمت کا کام مکمل کر لیا جائے گا. اس قلعہ کی وجہ سے چولستان کی ثقافت زندہ رہے گی۔

بہاولپور ڈویژن سے 80 کلومیٹر کی دوری پر واقع قلعہ دراوڑ صحرائے چولستان کا ایک عظیم شاہکار تصور کیا جاتا ہے. یہ قلعہ نویں صدی عیسوی میں تعمیر کیا گیا۔

قلعہ دراوڑ کو راجپوت بادشاہ رائے ججہ بھٹی نے تعمیر کروایا تھا. اسے ایک زمانے میں بہاولپور کا دارالحکومت سمجھا جاتا تھا۔ اس قلعے کو بہاولپور کے نواب محمد خان اول نے رائے ججہ بھٹی سے 1733 میں قبضے میں لے کر دوبارہ تعمیر کروایا۔

بعدازاں ہندو راجپوت راول رائے سنگھ نے 1747 میں میں اسے نواب اول خان دوئم سے واپس چھین لیا۔ یہ سلسلہ چلتا رہا اور عباسی حکمران نواب مبارک خان نے 1804 میں آخر کار اسے اپنے قبضے میں کر لیا. دراوڑفورٹ تعمیراتی لحاظ سے چولستان سب سے مضبوط قلعہ ہے۔

LEAVE A REPLY